صفحہ اول / پاکستان / اپوزیشن کو میثاق معیشت اور مفاہمت کی دعوت دیتا ہوں ،شہباز شریف

اپوزیشن کو میثاق معیشت اور مفاہمت کی دعوت دیتا ہوں ،شہباز شریف

اسلام آباد (قلب نواز سے )منتخب وزیراعظم محمد شہباز شریف نے اپوزیشن کو میثاق معیشت اور مفاہمت کی دعوت دیتے ہوئے کہا ہے کہ آئیں مل کر پاکستان کی قسمت سنواریں اور اس کو درپیش چیلنجزسے اسے نکالیں، غربت میں کمی، روزگار کی فراہمی، معاشی انصاف، سستا اور فوری انصاف ہمارا نصب العین ہے، بیرونی سرمایہ کاری میں اضافے کیلئے ویزہ فری انٹری کی سہولت دینگے، بجلی کی قیمتوں میں کمی لانے کیلئے تیل سے بجلی پیدا کرنے والی کمپنیاں فوری طور پر متبادل ذرائع سے بجلی کی پیداوار پر توجہ دیں،

سرمایہ کاری اور کاروبار دوست ماحول کے راستے میں حائل فرسودہ قوانین کا خاتمہ کرینگے، پورے ملک میں بہترین ٹرانسپورٹ کا جال بچھائیں گے، بجلی اور ٹیکس چوری سے نمٹنے کیلئے خود ذمہ داری ادا کروں گا، ایف بی آر میں خودکار نظام متعارف کرائیں گے، اب محنت کرنا ہو گی۔ اتوار کو وزیراعظم منتخب ہونے کے بعد قومی اسمبلی کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے منتخب وزیراعظم محمد شہباز شریف نے اعتماد کا اظہار کرنے والیتمام اتحادی جماعتوں کے قائدین آصف علی زرداری، بلاول بھٹو زرداری، ڈاکٹر خالد مقبول صدیقی، چوہدری شجاعت حسین، چوہدری سالک حسین، عبدالعلیم خان، سردار خالد مگسی اور تمام اراکین کا شکریہ ادا کیا۔

منتخب وزیراعظم نے کہا کہ محمد نوازشریف کی قیادت میں ملک میں ترقی اور خوشحالی کے جو انقلاب آئے ہیں وہ اپنی مثال آپ ہیں۔ یہ کہنا غلط نہیں ہو گا کہ محمد نوازشریف معمار پاکستان ہیں، بیس بیس گھنٹے کی لوڈ شیڈنگ انہی کے دور میں ختم ہوئی۔ منتخب وزیراعظم نے کہا کہ قوم شہید ذوالفقار علی بھٹو کی خدمات کو ہمیشہ یاد رکھے گی جنہوں نے پاکستان کو جوہری طاقت بنانے کی بنیاد رکھی لیکن ذوالفقار علی بھٹو کو عدالتی قتل کا شکار بنایا گیا۔ منتخب وزیراعظم نے کہا کہ وہ یہ کہے بغیر آگے نہی بڑھ سکتے کہ شہید ذوالفقار علی بھٹو کی صاحبزادی محترمہ بینظیر بھٹو شہید نے جمہوریت، قانون اور انصاف کیلئے اپنی جان کا نذرانہ پیش کیا۔

انہوں نے کہا کہ محمد نوازشریف کو اس بات کی سزا دی گئی ہے کہ انہوں نے پورے ملک میں ترقی اور خوشحالی کے مینار تعمیر کروائے، ملک کے تقریبا تمام عوامی اور اہم نوعیت کے منصوبوں پر ان کی تختیاں لگی ہیں۔ اس لئے بعض قوتوں کو یہ بات راس نہیں آئی اور تین بار ان کی منتخب حکومت کا تختہ الٹا گیا، انہیں سلاخوں کے پیچھے بھیجا گیا، ان پر ناجائز کیسز بنائے گئے اور انہیں جلاوطنی پر مجبور کیا گیا۔

مریم نوازشریف کو جیل میں ڈالا گیا، آصف علی زرداری کی بہن بھی جیل گئی، محترمہ بینظیر بھٹو کو شہید کیا گیا، ان مظالم کے باوجود نوازشریف، آصف علی زرداری اور بلاول بھٹو زرداری نے کبھی بھی پاکستان کے مفادات کیخلاف بات کرنا تو درکار، ایسا سوچا بھی نہیں۔ جب محترمہ بینظیر بھٹو شہید ہوئیں تو آصف علی زرداری نے پاکستان کھپے کا نعرہ لگایا، یہ وہ فرق ہے جو اس قومی قیادت نے پاکستان کی تاریخ میں ادا کیا ، دوسری طرف میں یہ کہنے پر مجبور ہوں کہ جب ان کی حکومت آئی تو پوری اپوزیشن کو سلاخوں کے پیچھے ڈالا گیا، خواتین اور بزرگوں تک کی پرواہ نہ کی گئی۔ اپوزیشن کیخلاف جو زبان استعمال کی گئی اس کو دہرایا نہیں جا سکتا۔

پاکستان اور افواج پاکستان کیخلاف زہر اگلا گیا حتی کہ پاکستان کی سلامتی اور بقا کے اہم ترین معاملے پر دو صوبوں کے وزرائے خزانہ کو کہا گیا کہ وہ آئی ایم ایف کے حوالے سے کوئی مدد فراہم نہ کریں، یہ قیادت کا فرق ہے۔ منتخب وزیراعظم نے کہا کہ پورا ایوان گواہ ہے کہ ہم نے کبھی ادلے اور بدلے کی سیاست کا سوچا بھی نہیں۔ ہم نے ہمیشہ پرامن جدوجہد کی اور کبھی کوئی گملہ بھی نہیں ٹوٹا، مگر قوم نے وہ دن بھی دیکھا جب 9 مئی کو اداروں پر حملے گئے جی ایچ کیو، کور کمانڈر ہائوسز اور ایئر فیلڈز پر حملے کئے گئے اور انہیں نشانہ بنایا گیا۔ ایک عام پاکستانی نے کبھی اس طرح کا تصور بھی نہیں کرسکتا۔

منتخب وزیراعظم نے کہا کہ ہزاروں شہدا کے ورثا پر کیا بیتی ہو گی جن کے پیاروں نے اس مٹی کی محبت میں دہشت گردی کا مردانہ وار مقابلہ کیا۔ وزیراعظم نے کہا کہ دہشت گردی کے ناسور کے خاتمے کیلئے اس قوم کے جوانوں نے اپنی جانوں کے نذرانے پیش کئے۔ منتخب وزیراعظم نے کہا کہ وطن عزیز پر مشکل صورتحال جب آئی تو اتحادی جماعتوں نے بطور پاکستانی اور بطور سیاستدان اپنی سیاست کی قربانی دینے کا فیصلہ کیا۔

انہوں نے راجہ پرویز اشرف کے بطور سپیکر کردار پر انہیں خراج تحسین پیش کیا۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان بے پناہ وسائل سے مالا مال ہے۔ اس ایوان میں چاروں صوبوں سے قابل ترین لوگ آئے ہیں، ہم ملکر ملک کی کشتی کو منجدھار سے نکال کر کنارے پر لے جائیں گے۔ پاکستان کے کروڑوں نوجوان انمول موتی اور ہمارا اثاثہ ہیں، چیلنجوں سے مل کر نمٹیں گے اور پاکستان کو اس صحیح سمت میں گامزن کرینگے، یہ کام مشکل ضرور ہے

لیکن ناممکن نہیں ہے۔ منتخب وزیراعظم نے ملک کو درپیش اقتصادی چیلنجوں اور مشکلات کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ ہمیں پاکستان کو درپیش چیلنجوں کا ادراک کرنا ہے، جاری مالی سال کے دوران 12300 ارب روپے کے محصولات کا ہدف مقرر کیا گیا ہے، این ایف سی ایوارڈ کے بعد 7 ہزار 300 ارب روپے وفاق کے پاس بچتے ہیں، سود کی ادائیگی 8 ہزار ارب روپے ہے، 700 ارب روپے کا خسارہ لے کر چلتے ہیں، ایسے میں ترقیاتی منصوبوں، صحت و تعلیم کی سہولیات، ملازمین کی تنخواہیں کہاں سے لائیں گے، یہ سب کچھ قرض در قرض لیکر کئی سالوں سے دیا جا رہا ہے، یہ 25 کروڑ عوام کا سنگین مسئلہ ہے۔ اپوزیشن کے احتجاج کرنے والے اراکین کو مخاطب کرتے ہوئے نو منتخب وزیراعظم نے کہا کہ یہ لوگ جس ایوان میں بیٹھے ہیں

ان کے واجبات بھی قرض سے ادا کئے جا رہے ہیں، کیا یہاں شور شرابا ہونا چاہئے یا نہیں۔ اس کا فیصلہ تاریخ کرے گی، ہم 80 ہزار ارب روپے کے اندرونی و بیرونی قرضے لے چکے ہیں، کیا ایک ایٹمی قوت کا حامل پاکستان اس بوجھ کو برقرار رکھ سکتا ہے۔ منتخب وزیراعظم نے کہا کہ ہم ملکر ضرور ملک کو ان مشکلات سے نکالیں گے، ہم اپنے قائدین اور اتحادیوں کے ساتھ ملکر پاکستان کو عظیم بنائیں گے اور آگے چلیں گے۔ انہوں نے کہا کہ بجلی کی قیمتوں میں ہوشربا اضافہ ایک چیلنج ہے، 2300 ارب روپے کا گردشی قرضہ ہے، 3800 ارب روپے کا بجلی کی ترسیل اور وصولیاں2800 ارب روپے ہیں، یہ ناقابل برداشت ہے۔

وزیراعظم نے کہا کہ ایک ہزار ارب روپے سے ملک بھر میں درجنوں بہترین ہسپتال اور یونیورسٹیاں بنا سکتے ہیں، زرعی اور انفارمیشن ٹیکنالوجی کا انقلاب لا سکتے ہیں لیکن ایک ہزار ارب روپے خسارہ میں جا رہے ہیں۔ بعض سرکاری اداروں میں 600 ارب روپے کا خسارہ ہے، پی آئی اے کو گزشتہ دور میں ایک وزیر کے ریمارکس کے بعد دنیا میں پابندی کا سامنا کرنا پڑا، ان حالات میں ترقیاتی عمل دیوانے کا خواب ہے، ہم پاکستان کوا س گرداب سے نکالیں گے، بجلی و گیس چوری کا سارا بوجھ غریب عوام اٹھاتے ہیں، ہم نے بجلی و ٹیکس چوری روکنی ہے، اس کی ذمہ داری خود سنبھالوں گا ۔

خود کار جدید ٹیکنالوجی کو جلد یہاں نافذ کرینگے۔ نئی حکومت کے اقدامات سے مہنگائی میں کمی آئے گی، روز گار بڑھے گا اور قرض کا خاتمہ کرینگے۔ اس کیلئے تمام قائدین سے مل کر اقدامات اٹھائیں گے۔ ان اقدامات کے ثمرات ایک سال میں سامنے آئیں گے۔ منتخب وزیراعظم نے کہاکہ پاکستان ہم سب کا ہے ، ملک کی ترقی اورخوشحالی میں سب اپنا حصہ ڈالیں گے اور اقوام عالم میں اپنا کھویا مقام بحال کرینگے۔

انہوں نے معاشی منصوبوں سے آگاہ کرتے ہوئے بتایا کہ آئی ٹی کی برآمدات میں نمایاں اضافہ کرینگے، زراعت کے شعبہ میں بہتری لائیں گے، نوازشریف نے کسانوں کو ٹیوب ویلوں کیلئے سستی بجلی دی، ہم نے پنجاب سے جعلی ادویات کا خاتمہ کیا، کھاد پر سبسڈی براہ راست کسان کو دیں گے۔ چھوٹے کاشتکاروں کیلئے ٹیوب ویل پروگرام شروع کرینگے، بیج مافیا کو ختم کیا جائیگا، دنیا سے اعلی ترین بیج منظور کر کے کسان کو دینگے، اپنی فی ایکڑ پیداوار بڑھائیں گے، جعلی ادویات کا چاروں صوبوں کے ساتھ ملکر خاتمہ کرینگے، صوبوں کے ساتھ ان کی رہنمائی میں کام کرینگے، لائیو سٹاک کے شعبہ میں بہتری لائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ پورے ملک میں فعال ٹرانسپورٹ کے نظام کا جال بچھائیں گے تاکہ وقت بچایا جا سکے۔

وفاق میں جدید علاج کی سہولیات فراہم کرینگے۔ انہوں نے کہا کہ ہونہار بچوں اور بچیوں کو بیرون دنیا میں عالمی معروف یونیورسٹیوں میں سکالرشپس دینگے تاکہ قوم کے یہ بچے دنیا میں اپنا مقام پیدا کریں۔ انہوں نے کہا کہ سستے اور فوری انصاف کا نظام مشاورت سے لائیں گے۔ سنگین جرائم میں ملوث نہ ہونے والے بچوں جن کی سزا دو سال سے کم ہے ان کی سزا معاف کر کے انہیں ہنر مندی کی تربیت دے کر معاشرے کا باوقار شہری بنائیں گے۔

انہوں نے کہا کہ 9 مئی کے واقعات میں ملوث عناصر کو سزائیں ضرور ملیں گی تاہم جو اس میں ملوث نہیں ہیں ان کو کوئی گزند نہیں پہنچائی جائے گی، شہیدوں کی یادگاروں کی بے حرمتی کرنے والوں کو سزائیں ضرور ملیں گی، 9 مئی کو ذاتی انا کی خاطر شہدا کی بے حرمتی کر کے ان کے خاندانوں کو تکلیف دی گئی۔ منتخب وزیراعظم نے کہا کہ دہشت گردی کے خاتمہ کیلئے قومی ایکشن پلان پر عمل کرینگے،

نوازشریف کے دور میں دہشت گردی کا خاتمہ ہوا لیکن ان کو بعد ازاں سیاسی مقاصد کیلئے واپس لایا گیا، ہم دہشت گردی کا خاتمہ کرینگے۔ انہوں نے کہا کہ اقلیتوں کے حقوق کا تحفظ اور پاسداری ہماری مذہبی ذمہ داری ہے، خواتین آبادی کا نصف ہیں ان کو بااختیار بنا کر انہیں قومی ترقی کے سفر میں ساتھ شامل کرینگے، خواتین کو مقام کار پر ہراساں کرنا ناقابل قبول ہے۔

انہوں نے کہا کہ سرمایہ کاری اور کاروبار دوست ماحول مہیا کرنے کیلئے اقدامات اٹھائیں گے، اس کے راستے میں حائل فرسودہ قوانین کا خاتمہ کرینگے، ٹیکس کے نظام میں اصلاحات لائیں گے اور بہترین ٹیکس دہندگان کو معمار کادرجہ دینگے، ایکسپورٹ زونز کا جال بچھائیں گے، ٹیکس ریفنڈ میں تاخیر کا سدباب کرینگے،

ماضی میں رشوت کے بغیر ٹیکس ری فنڈ نہیں کیا جاتا تھا۔ 10 دن میں ایف بی آر ٹیکس ریفنڈ کرے ورنہ وہ جوابدہ ہونگے۔ منتخب وزیراعظم نے کہا کہ چھوٹے کاروبار کیلئے نوجوانوں کو قر ضے دیئے جائیں گے، بیرونی سرمایہ کاری کی راہ میں حائل رکاوٹیں دور کرینگے، دوست ممالک کیلئے ویزہ فری انٹری کرینگے۔

منتخب وزیراعظم نے کہا کہ امریکہ، یورپی یونین اور دیگر ممالک سے تعلقات میں مزید بہتری لائیں گے، چین، سعودی عرب، ترکی، قطر، یو اے ای نے اچھے برے وقت میں ہمیشہ پاکستان کا ساتھ دیا ہے۔ شہباز شریف نے کہا کہ غزہ اور بھارت کے غیر قانونی زیر قبضہ جموں و کشمیر میں قتل و غارت گری کا بازار گرم ہے، غزہ میں اسرائیل کی بدترین دہشت گردی جاری ہے، اسرائیل کو دہشت گردی سے نہ روکا جانا افسوسناک ہے۔

کشمیر میں بے گناہ کشمیریوں کے خون سے وادی سرخ ہو چکی ہے اور عالمی برادری خاموش تماشائی بنی ہوئی ہے، مشرقی تیمور کے معاملے پر دہرا معیار اپنایا جاتا ہے، ہم نے متحد ہو کر اس شور کو شعور میں دبانا ہے، فلسطین اور کشمیر میں مظالم کی ایوان مذمتی قرارداد منظور کرے، پاکستان ان کے حل کیلئے اپنا کردار ادا کرے گا۔

انہوں نے کہا کہ ماحولیاتی و موسمیاتی تبدیلیوں سے پاکستان متاثر ہے، موسمیاتی تبدیلیوں کی وجہ سے2022 میں پا کستان میں بدترین سیلاب آیا، اس سے نمٹنے کیلئے اقدامات اٹھائیں گے۔ تیل سے بجلی پیدا کرنے والی کمپنیاں متبادل توانائی کا جال بچھائیں اور شمسی اور ونڈ سے بجلی کے حاصل کرنے میں اپنا سرمایہ لگائیں۔ انہوں نے کہا کہ انتخابات میں شکایات کے ازالے کیلئے متعلقہ ادارے موجود ہیں، آئی ایم ایف کو خط لکھنے کی کیا ضرورت پیش آئی، یہ غیر ملکی مداخلت کی دعوت دی گئی جو ملکی دشمنی ہے،

میرا سوال ہے کہ کیا نوازشریف نے اپنے خلاف ہونے والے فیصلوں پر ایسا رویہ اختیار کیا؟۔ ماضی میں بھی 14 اگست کو خوشیاں منانے کی بجائے پی ٹی آئی نے لانگ مارچ کیا، یہ کس کے کہنے پر کیا، یہ راز ضرور کھلے گا۔ انہوں نے انتخابی اصلاحات کی دعوت دیتے ہوئے کہا کہ آیئے ملکر انتخابی عمل میں حائل رکاوٹیں دور کریں۔ انہوں نے کہا کہ 2018 میں پری پول دھاندلی ہوئی، نتائج بدلے گا، اس وقت نوازشریف اور ان کی صاحبزادی مریم نواز جیل میں تھے،

نوازشریف کی اہلیہ کی وفات پر انہیں اطلاع بھی نہیں دی گئی۔ انہوں نے کہا کہ 2024 کے عام انتخابات میں اس ایوان میں کسی کو اکثریت حاصل نہیں، ہم نے کھلے دل سے سنی اتحاد کونسل کو حکومت بنانے کی دعوت دی، ہم نے فیٹف میں رضا کارانہ پاکستان کیلئے ان کی حکومت کا ساتھ دیا۔ کووڈ کے دور میں تعاون کیا۔

انہوں نے کہا کہ اتحادی جماعتوں کو ساڑھے چار کروڑ ووٹ ملے، سنی اتحاد کونسل کو ایک کروڑ 65 لاکھ ووٹ ملے۔ جمہوری معاشروں میں جس کو عددی اکثریت حاصل ہو وہی حکومت بناتا ہے۔ انہوں نے میثاق معیشت اور مفاہمت کی دعوت دیتے ہوئے کہا کہ آئیں مل کر پاکستان کی قسمت سنواریں، پاکستان کو چیلنجوں سے نجات دلائیں، صوبائی تعصبات کا خاتمہ کرینگے،

چاروں وفاقی اکائیوں میں ہم آہنگی و یکساں حقوق وفاق کا ڈھانچہ ہے، پاکستان نے ہمیں بہت کچھ دیا ہے۔ منتخب وزیراعظم نے کہا کہ اگر آج ہم معجزوں کے منتظر ہیں تو جان لینا چاہئے کہ معجزے اور جادو ٹونے کام نہیں آئینگے، ہمیں محنت کرنا ہو گی۔ محنتی ہاتھوں سے تقدیریں بدلتی ہیں۔

آخر میں انہوں نے کہا کہ اکہ ہم نے پاکستا ن کو دیناہے پاکستان سے کچھ لینا نہیں ہے ہر چیز پاکستان کیلئے ہے جب تک اللہ کی تائید شامل ہو جذبے ہو تو کامیابی ممکن ہوگی ۔ایوان میں شور نہیں شعور کا راج ہونا چاہیے،بات پاکستان کی ہو تو انا کو فنا کر سکتے ہیں ۔ ۔محنتی ہاتھوں سے تقدیریں بدلتی ہیں ۔عوام کو مزید انتخابی نتیجے کی ضرورت نہیں انہیں صرف نتیجہ چاہیے ۔شہباز شریف نے ایک گھنٹہ 23منٹ تقریر کی ۔

٭۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نوٹ: قلب نیوز ڈاٹ کام ۔۔۔۔۔ کا کسی بھی خبر اورآراء سے متفق ہونا ضروری نہیں. اگر آپ بھی قلب نیوز ڈاٹ کام پر اپنا کالم، بلاگ، مضمون یا کوئی خبر شائع کر نا چاہتے ہیں تو ہمارے آفیشیل ای میل qualbnews@gmail.com پر براہ راست ای میل کر سکتے ہیں۔ انتظامیہ قلب نیوز ڈاٹ کام

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے